in ,

مالیخولیا کا علاج

مالیخولیا کا علاج
مالیخولیا کا علاج

مالیخولیا کا علاج

مالیخولیا کا علاج
مالیخولیا کا علاج

مالیخولیا کا علاج
امام رازی کی کتاب کتاب الفاخر فی الطب سے ماخوذ
ناقل
حکیم المیوات قاری محمد یونس شاہد میو

مالیخولیا کا سبب تمام بدن کا سوءمزاج سوداوی ہوتا ہے اور اس کا ضرر باالخصوص دماغ کو پہونچتا ہے۔ اس قسم میں سودا کی علامات تمام بدن میں ظاہر ہوتی ہے۔ اس کی ایک دوسری قسم بھی ہے جس میں پورے بدن میں سودا کی کثرت کے ساتھ ساتھ ورم طحال، ریاح کی کثرت اور پیٹ پھولنے جیسی علامات بھی پائی جاتی ہیں ۔ دونوں اقسام کے اعراض کے طور پر ابتداء میں خراب و خیالات، بزدلی ، بد گمانی اور نا امیدی ظاہر ہوتی ہے۔
علاج:
جالینوس نے اس کا علاج یہ بتایا ہے کہ تیزمسہل دوائیں استعمال کریں۔ پہلی قسم کے مالیخولیا میں قيفال نامی رگ کی فصد کھولیں اگر سیاہ خون خارج ہو تو طاقت و قوت کے لحاظ سے اسے خارج کریں۔ کیونکہ یہ مرض کے پورے بدن میں پھیل جانے اور دماغ پر غلبہ پا جانے کی دلیل ہے اور اگر سرخ خون خارج ہوتو اسے بند کر دیں کیونکہ یہ اس بات کی دلیل ہے کہ خراب کیموں صرف دماغ کی رگوں میں ہے اور ابھی پورے بدن میں نہیں پھیلا ہے۔ لیکن یہ ضروری ہے کہ پیشانی کی رگوں سے خون خارج کر یں۔ اس کے بعد ساری ضروری تدابیر اختیار کریں۔ چنانچہ اگر دوسری قسم کا مالخوليا یعنی کے ورم طحال کے ساتھ ہو تو ورید اسلیم سے برداشت کی حد تک خون خارج کریں چنانچہ اگر خون سیاہ ہو تو اسے زرد ہونے تک خارج کرتے رہیں۔ اس کے بعد ہضم کی تقویت اور بدہضمی سے بچانے پر توجہ مرکوز کریں۔ پانی کم پلائیں اور طحال کے علاج کے لیے مسہلات سودا اور طحال کے ضمادات استعمال کریں تا کہ اس کا مزاج تبدیل ہو جائے ۔ بدن کی ترطبیب پر بطور خاص پہلے قسم میں خاص دھیان دیں۔
یہ مرض بکثرت تنقیہ اور علاج میں صبر کا تقاضہ کرتا ہے۔ کیونکہ یہ مرض نیز تمام سوداوی امراض علاج بہت مشکل سے قبول کرتے ہیں۔ بہرحال اس کے لیے بہترین دوامعجون نجاح ہے جس کا نسخہ درج ذیل ہے۔
ہلیلہ، بلیلہ، آملہ ہر ایک ۳۵ گرام، بسفایج ، افتیمون، اسطوخودوس، تر بد ہر ایک ۱۸ گرام، سب دوا میں کوٹ چھان کر شہد میں معجون بنائیں اور مریض کی قوت کے مطابق استعمال کرائیں۔ اگر اس میں اسہال کی صفت پیدا کرنا چاہیں تو اس میں غاریقون ، خربق سیاہ اور سقمونیا کا اضافہ کر کے پہلے حب شبیارکھلا کر پھر اسے استعمال کرائیں۔ اسے دیگر سوداوی امراض مثلا پرانی غلیظ خارش، جذام اور سیاہ چھیپ میں بھی استعمال کرایا جاسکتا ہے۔
نسخہ جوشاندہ افتیمون:
ہلیلہ سیاہ ۷۰ گرام، بسفائج نیم کوب ۱۴ گرام تر بد ۵ گرام، مویز منقی ۵۲ گرام، تمام دوا ئیں پانی 1600ملی لیٹر میں اتنا جوش دیں کہ صرف400 ملی لیٹر پانی رہ جائے۔ پھر اس میں ۲۴ گرام تازہ افتیمون شامل کر کے دوبارہ جوش دے کرمل چھان لیں اور پہلے غاریقون ۳ گرام ،شحم حنظل 10گرام نقطی نمک گرام شہد میں معجون بنا کر کھانے سے تین گھنٹہ پہلے کھلا کر مندرجہ بالا جوشاندہ پلائیں اور وحشت پیدا ہوجانے کے بعد ۲۴ گرام افتیون باریک کر کے سکنجبن میں ملاکر پلائیں کیونکہ یہ تیز مسہل سودا ہے اور ہلیلہ، مویز منقی اور افیون سے تیارشدہ معجون برابر استعمال کراتے رہیں۔
جوشاندہ دیگر۔
ہلیلہ زردوسیاہ ہر ایک ۳۵ گرام، شاہترہ ۸اگرام سنامکی 10گرام،افسنتین ، بسفائج وتر بد، غافث، برگ تلسی تخم بادرنجو یہ ، رام تلسی ، گاؤ زباں ، منڈی،ککروندہ ہر ایک کے گرام، سنگ لا جور د نیم کوب 2گرام، مویز منقی70 گرام۔ تمام دوا ئیں 1600 ملی لیٹر پانی میں ڈال کر ہلکی آنچ پر پکا کر جب پانی چوتھائی حصہ رہ جائے تو اتار لیں۔ پھر اس میں ۱۴ گرام بار یک افتیمون شامل کر کے مل کر چھان لیں اور اس میں سے ۲۸۰ گرام پلائیں اور اگر اس سے قے آجائے تو باقی جوشاندہ بھی پلا دیں لیکن
اس سے قبل رات کی ابتداء میں بھی معجون دیں۔
نسخہ:
ایارج فیقر4 گرام، غاریقون ۲ گرام نفطی نمک۳ گرام،سقمونیا250 ملی گرام – تمام دوائیں شہد میں ملا کر استعمال کرائیں۔ یا جوشاندہ ہلیلہ استعمال کرائیں ،یا بوڑھا مرغ خوب نمکین پانی میں پکا کر استعمال کرائیں۔ یا بسفائج کا جوشاندہ دیں کیونکہ یہ تمام دوائیں بکثرت سودا کا اخراج کرتی ہیں۔ راحت کے ایام میں دوام کے ساتھ معجون نجاح استعمال کرائیں، نمکسود،نمکین اشیاء، بینگن،لہسن، کرم کلہ ، دال مسور، باقلا، پہاڑی جانوروں اور پرندوں کا گوشت، پرانی شراب اور تمام نمکین، چر پری، ترش وکسیلی اشیاء سے پرہیز کرائیں۔ غذا میں چکنائی والے ، شیر ہیں اور لذیذ کھانے مثلا روغن بادام اور شکر سے تیار شدہ پتلا و پختہ فالودہ ، بکری کے بچے اور موٹی مرغی کا گوشت اور خوب پانی ملائی ہوئی شراب دیں ۔ مخلوط شراب سے بہتر ترطيب بدن کے لیے کوئی چیز نہیں بالخصوص جب اس میں گاوزباں بھی بھگو کر استعمال کیا جائے ۔ اس کے علاوہ بدن میں تروتازگی پیدا کرنے کے لیے جب غذا ہضم ہونے لگے اس وقت مریض کو گرم پانی میں بٹھا دیں۔ اس کے بعد مریض کو سلادیں۔
معجون مفرح:
گاوزباں ، زرنبار ہر ایک ایک حصہ کوٹ چھان لیں اور ۴ گرام مخلوط شراب کے ہمراہ دیں یا گاو زبان ، شراب میں بھگو کر چھان کر وہ شراب پلائیں۔
معجو ن براے ایام راحت
اسپند، تلسی ، کنوچہ سفید، افتیمون، اسطوخودوس ہر ایک ۳۵ گرام لے کر تمام دواؤں کے تین گنا پانی میں تین دنوں تک بھگوکر ہلکی آنچ پر دو تین جوش دیں۔ پھر پانی نچوڑ کر چھان لیں۔ اس کے بعد اس پانی کے ہموزن زرد آلو لیں اور انہیں کوٹتے ہوئے یہ پانی اس پر ڈالتے جائیں یہاں تک کہ دونوں مل جائیں پھر انہیں ہلکی آنچ پر جوش دیں اور ہر400 ملی لیٹر میں لونگ ، با درنجبو یہ،مصطگی، رام تلسی ، زعفران بجورا کا خشک چھلکا ہر ایک 10گرام باریک کر کے شامل کردیں۔ یکجان کرنے کے بعد استعمال کرائیں۔
علم و فکر اور خوف کے ازالے کے لیے تقویت قلب بھی ضروری ہے۔ اس کے لیے تنقیہ بدن کے بعد قلب کا جائزہ لیں چنانچہ اگر وہ مائل بہ حرارت ہوخفقان مع حرارت کی کچھ دوائیں دیں اور اگر وہ مائل بہ برودت ہو تو ۵ گرام تریاق ، گاؤ زباں، بھیگی ہوئی شراب کے ہمراہ دیں اور دواء المسک شیریں وترش آب بادرنجبویہ کے ساتھ دیں۔ بادرنجبویہ کی سبزی روٹی کے ساتھ کھلائیں۔ مفرحات یا وہ دوا جو ہم اس سے پہلے بیان کر چکے ہیں یا سفوف گاؤ زباں اور سفوف زرنبار استعمال کرائیں۔ اگر مرض کا ظہور سر میں دھوپ لگنے یا گرم دوائیں اور غذائیں مثلالہسن، پیاز ، رائی ، سیاہ مرچ، سداب اور جوارشات کے استعمال سے ہوا ہو تو دھوپ لگنے کی صورت میں روغن بنفشہ، روغن نیلوفر اور روغن کدو ناک میں ڈالیں اور تم خیارین، مغز بادام شیریں، تم خس اور خشخاش سفید، آب نیلوفر میں تین سے ۱۰ مرتبہ پروردہ کر کے پھر اس کا روغن کشید کر لیں ۔ مریض کو کا فور کے استعمال سے پرہیز کرائیں کیونکہ یہ مزید خشکی و بے خوابی پیدا کرنے کا باعث بنتا ہے۔ اس مرض میں درج ذیل نطول بھی مفید ہے۔
نسخہ
نفشہ خشک، گل نیلوفر، خشخاش، جوکا گاڑھا شیرہ،خطمی کی ٹہنیاں اور کدو کے پتے ایک بڑے گھڑے میں جوش دے کر اسے سر پر دھار یں اس کے بعد سر پر عورت کا دودھ دو ہیں۔اور اگرگرم دواؤں یا غذاؤں کے استعمال سے مرض پیدا ہوا ہو اور مریض کو بخار ہو تو مندرجہ ذیل جوشاندے سے بدن کا تنقیہ کریں۔
نسخہ۔
ہلیلہ زرد، آلو بخارا، املی ، سپستاں، شاہترہ پانی میں جوش دے کر چھان کر شکر کے ساتھ پلائیں اور اگر بخار نہ ہو تو ۱۴۰ملی لیٹرآب کاسنی میں ۴ گرام صبر بھگو کر اسے پلائیں۔ سکننجبین اور گرم پانی سے قے کرائیں۔ سکنجبین اور رب انگور سے غرغرہ کرائیں۔ اس کے بعد تمام مرطب تدابیر مثلا سعوط اور اور سر پر پانی ڈالنے کی تدابیر اختیار کریں۔ نیز حمام میں لے جا کر سر پرخوب پانی ڈالیں۔ گوشت سے پرہیز کرائیں صرف آش جو، انڈے کی زردی اور خوب سفید مچھلی پر اکتفا کرائیں۔

Written by admin

Leave a Reply

Your email address will not be published.

GIPHY App Key not set. Please check settings

Happy Defence Day Pakistan in 2022

قدیم اطباء صرع (مرگی)کا علاج کیسے کرتے تھے:

قدیم اطباء صرع (مرگی)کا علاج کیسے کرتے تھے: